5 45

سیکیورٹی نقص کی وجہ سے فیس بک کے5 کروڑ اکاؤنٹس کے متاثر ہونے کا خدشہ

سان فرانسیسکو: سماجی رابطوں کی ویب سائٹ فیس بک نے اس بات کا انکشاف کیا ہے کہ سیکیورٹی نقائص کی وجہ سے تقریباً 5 کروڑ صارفین کے اکاؤنٹ تک ہیکرز کو رسائی حاصل ہوگئی تھی۔

سماجی رابطوں کی ویب سائٹ کی جانب سے جاری بیان کے مطابق فیس بک کے کوڈ میں موجود سیکیورٹی نقص کی وجہ سے ہیکرز کو صارفین کی اہم معلومات تک رسائی حاصل ہوئی اور انہوں نے سائبر حملے کرکے تقریباً 5 کروڑ اکاؤنٹس کے ‘ایکسس ٹوکنز’ چرالیے جس کی بدولت انہیں اکاؤنٹس تک رسائی حاصل ہوگئی۔

فیس بک کے شعبہ پروڈکٹ مینجمنٹ کے نائب صدر گائے روزن نے اپنے بلاگ لکھا کہ ‘اس بات میں کوئی شک نہیں کہ ہیکرز نے فیس بک کے کوڈ میں موجود نقص کا ناجائز فائدہ اٹھایا’۔

انہوں نے لکھا کہ ‘ہم نے اس خامی کو دور کردیا ہے اور قانون نافذ کرنے والوں کو مطلع کردیا گیا ہے’۔

اس حوالے سے فیس بک کے بانی مارک زکر برگ کا بیان بھی سامنے آیا ہے جس میں انہوں نے کہا کہ ‘انجینئرز کو منگل کے روز اس نقص کا علم ہوا اور جمعرات کو انہوں نے اسے ٹھیک کرلیا’۔

مارک زکربرگ نے کہا کہ انہیں یہ نہیں معلوم نہیں کہ آیا ہیکرز نے اکاؤنٹس کا غلط استعمال کیا ہے یا نہیں تاہم یہ ایک سنگین معاملہ ہے۔

فیس بک نے حفظ ماتقدم کے طور پر عارضی طور پر ‘view as’ کا فیچر غیر فعال کردیا ہے جو کہ ایک پرائیوسی ٹول ہے جس کے ذریعے صارف یہ طے کرسکتا ہے کہ اس کا اکاؤنٹ دوسرے لوگوں کو کس طرح نظر آئے۔

زکربرگ نے اپنی فیس بک پوسٹ میں لکھا کہ ‘ہمیں ان لوگوں کی جانب سے مستقل سائبر حملوں کا سامنا ہے جو صارفین کا ڈیٹا چوری کرنا چاہتے ہیں تاہم مجھے خوشی ہے کہ ہم نے اس کا بروقت سراغ لگایا اور اسے درست کرکے اکاؤنٹس کو محفوظ بنادیا’۔

فیس بک کا کہنا ہے کہ اس نے اضافی حفاظتی اقدام اٹھاتے ہوئے مزید 4 کروڑ اکاؤنٹس کے ‘access tokens’ کو ری سیٹ کردیا ہے جس کی وجہ سے ان صارفین کو فیس بک پر دوبارہ لاگ ان ہونا پڑے گا۔

خیال رہے کہ اس سے قبل 2016 میں بھی فیس بک کے لاکھوں صارفین کا ڈیٹا ایک سیاسی فرم نے چرالیا تھا جنہیں مبینہ طور پر امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی انتخابی مہم کے دوران استعمال کیا گیا تھا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں