پیرو میں سیلاب، طوفانی بارشوں سے 72 افراد ہلاک

pero

لیما: جنوب امریکی ملک پیرو میں شدید بارشوں، دریاؤں میں سیلاب، طوفان اور مٹی کے تودے گرنے سے ہلاک ہونے والوں کی تعداد 72 تک جا پہنچی۔ امریکی خبر رساں ایجنسی ’اے پی‘ کے مطابق پیرو کی انتظامیہ کا کہنا ہے کہ شدید بارشوں، دریاؤں میں سیلاب، طوفان اور مٹی کے تودے گرنے سے ہونے والا جانی و مالی نقصان گزشتہ دو دہائیوں کے دوران سب سے تباہ کن ہے، جبکہ اس سے نصف سے زائد ملک متاثر ہوا ہے۔ پیرو کے وزیر اعظم فرنینڈو زاوالا نے مقامی ریڈیو اسٹیشن ’آر پی پی‘ سے بات کرتے ہوئے رواں سال کے آغاز سے ہونے والی شدید بارشوں اور طوفان سے 72 افراد کے ہلاک ہونے کی تصدیق کی۔ حکومت کا کہنا ہے کہ 1998 میں بھی پیرو میں ایسی ہی صورتحال پیش آئے تھی، جس میں 374 افراد ہلاک ہوگئے تھے۔ شدید بارشوں کے باعث پیرو کے پیسیفک ساحل کے ساتھ واقع شہروں میں نکاسی آب کے نظام کو بری طرح نقصان پہنچا، جبکہ وزارت صحت کی جانب سے شہریوں کو وبائی امراض سے بچانے کے لیے جراثیم کُش ادویات کا اسپرے شروع کردیا گیا۔ طوفانی بارشوں کے باعث پیرو کے دارالحکومت لیما میں گزشتہ ایک ہفتے سے پانی کی فراہمی بند ہے، جبکہ حکومت کی جانب سے کئی متاثرہ شہروں میں ایمرجنسی نافذ کرنے کے ساتھ امن عامہ قائم رکھنے کے لیے مسلح افواج کو بھی تعینات کردیا گیا ہے۔

100total visits,1visits today