ﻣﺪﺍﺭﺱ ﮐﮯ ﺍﺳﺎﺗﺬﮦ ﺍﻭﺭ ﻃﻠﺒﺎﺀ کی خدمت میں…

fb_img_1500025443993

تحریر: شکیل رانا

مدارس میں گذشتہ بدھ سے نئے تعلیمی سال کا آغاز ہوچکا ہے اور بعض مدارس کل بروز ہفتہ سے اپنے نئے تعلیمی سال کا آغاز کریں گے،اس حوالے سے چند معروضات پیش خدمت ہیں.

میں نے ﺳﻦ 1997ﻣﯿﮟ ﭘﺎﻧﭽﻮﯾﮟ جماعت ﻣﯿﮟ “ﺍﻭﻝ ﭘﻮﺯﯾﺸﻦ” ﻟﯿﻨﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺍﺳﮑﻮﻝ ﮐﻮ ﺧﯿﺮﺑﺎﺩ ﮐﮩﮧ ﮐﺮ جب ﻣﺪﺭﺳﮯ ﮐﺎ ﺭﺥ ﮐﯿﺎ ﺗﻮ ﺍﺱ ﻭﻗﺖ ﻭﺍﻟﺪ ﺻﺎﺣﺐ ﮐﮯ ﭘﻮﺭﮮ ﺧﺎﻧﺪﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﺋﯽ ﻋﺎﻟﻢ ﺍﻭﺭ ﻣﻔﺘﯽ ﺗﻮ ﺩﺭﮐﻨﺎﺭ ﺍﯾﮏ ﺣﺎﻓﻆ ﺗﮏ ﻣﯿﺴﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﻬﺎ،ﮔﻠﮕﺖ ﮐﮯ ﺍﯾﮏ ﻣﻘﺎﻣﯽ ﻣﺪﺭﺳﮯ ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﮯ ﻣﺤﺴﻦ ﻭﻣﺮﺑﯽ ﻣﺎﻣﻮﮞ ﮐﯽ ﺳﺮﭘﺮﺳﺘﯽ ﺍﻭﺭ ﺷﺎﮔﺮﺩﯼ ﻣﯿﮟ ﺣﻔﻆ ﻗﺮﺁﻥ ﻣﮑﻤﻞ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻣﺘﻮﺳﻄﺎﺕﺑﻬﯽ ﻭﮨﯽ ﺳﮯ ﻣﮑﻤﻞ ﮐﺮﮐﮯ ﺳﻦ 2001 ﻣﯿﮟ ﺟﺎﻣﻌﮧ ﻓﺮﯾﺪﮦ ﺍﺳﻼﻡ ﻣﯿﮟ ﺩﺭﺟﮧ ﺍﻭﻟﯽ ﻣﯿﮟﺩﺍﺧﻞ ﮨﻮﺍ ﺗﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﻣﺎﻣﻮﮞ ﮐﯽ ﺳﺮﭘﺮﺳﺘﯽ ﺳﮯ ﺑﻬﯽ ﻣﺤﺮﻭﻡ ﮨﻮا، ﻭﮨﺎﮞ ﭘﺮ ﮔﻠﮕﺖ ﺳﮯ ﺗﻌﻠﻖﺭﮐﮭﻨﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺍﯾﮏ ﺍﺳﺘﺎﺩ ﻧﮯ ﺯﺑﺮﺩﺳﺘﯽ ﺳﺮﭘﺮﺳﺘﯽ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺮﺩﯼ ﺗﻮ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﻧﺎﻗﺺ ﺫﮨﻦ ﻧﮯ ﺍﺱتسلط ﮐﻮ ﻣﺎﻧﻨﮯ ﺳﮯ ﺍﻧﮑﺎﺭ ﮐﺮﺩﯾﺎ،جس کا ابهی تک افسوس ہے،اﺱ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﭘﻮﺭﮮ ﺩﺭﺱ ﻧﻈﺎﻣﯽ ﮐﮯ ﺩﻭﺭﺍﻥ ﮐﺴﯽ ﮐﯽﺳﺮﭘﺮﺳﺘﯽ ﻣﯿﺴﺮ ﻧﮧ ﮨﻮﺳﮑﯽ ﻧﺘﯿﺠﮧ ﯾﮧ ﻧﮑﻼ ﮐﮧ ﺩﻭﺭﮦ ﺣﺪﯾﺚ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺍﺣﺴﺎﺱ ﮨﻮﺍ ﮐﮧ مجهےﻋﺮﺑﯽ ﻣﯿﮟ ﻣﺤﻨﺖ ﮐﺮﻧﯽ ﭼﺎﮨﯿﮯ ﺗﻬﯽ ،ﺧﻄﺎﺑﺖ ﻭ ﮐﺘﺎﺑﺖ ﭘﮧ ﺑﻬﺮﭘﻮﺭ توجہ دینے ﮐﯽ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﺗﻬﯽ ،ﺧﺎﺭﺟﯽ ﻣﻮﺿﻮﻋﺎﺕ ﭘﮧ ﻣﻄﺎﻟﻌﮧ ﺑﻬﯽ ﺍﺯﺣﺪ ﺿﺮﻭﺭﯼ ﮐﺎﻡ ﺗﻬﺎ،اس کے علاوہ بهی بهی بہت سارے امور توجہ طلب تهے،ﻣﮕﺮ ﺍﺏ ﮐﺎﻓﯽ ﺩﯾﺮ ﮨﻮﭼﮑﯽ ﺗﻬﯽ ﻟﯿﮑﻦ ﮨﻤﺖ ﭘﻬﺮ ﺑﻬﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﺎﺭﯼ، ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺧﻮﺩ ﮐﻮ ﮐﺴﯽ ﮐﯽ ﺳﺮﭘﺮﺳﺘﯽ ﻣﯿﮟﺩﮮ ﮐﺮ ﮐﭽﮫ ﺗﻼﻓﯽ ﮐﯽ ﮐﻮﺷﺶ ﮐﯽ ﺗﻮ ﮐﺎﻓﯽ ﻓﺎﺋﺪﮦ ﻣﻨﺪ ﺛﺎﺑﺖ ﮨﻮﺍ ﻣﮕﺮ ﮔﺰﺷﺘﮧ 10ﺳﺎﻝ ﺍﻥ ﭼﯿﺰﻭﮞ ﭘﮧ ﻣﺤﻨﺖ ﻧﮧ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯽ ﻏﻠﻄﯽ ﺁﺝ ﺑﻬﯽ ﺩﻣﺎﻍ ﭘﺮ ﭘﯿﺸﻤﺎﻧﯽ ﮐﮯ ﮨﺘﮭﻮﮌﮮ ﺑﺮﺳﺎ ﺭﮨﯽ ﮨﮯ..

ﻣﯿﺮﯼ ﮔﺰﺍﺭﺵ ﮨﮯ ﺍﻥ ﺍﺳﺎﺗﺬﮦ ﮐﺮﺍﻡ ﺳﮯ ﺟﻮ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﻣﺪﺍﺭﺱ ﻣﯿﮟ ﺗﺪﺭﯾﺲ ﮐﯽ ﺧﺪﻣﺖ ﺍﻧﺠﺎﻡ ﺩﮮﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ

کہ
ﻭﮦ ﺍﻭﭘﺮ ﺫﮐﺮ ﮐﺮﺩﮦ ﻣﻌﺎﻣﻼﺕ ﻣﯿﮟ ﺍﺑﺘﺪﺍﺀ ﺳﮯ ﮨﯽ ﻃﻠﺒﺎﺀ ﮐﯽ ﺑﻬﺮﭘﻮﺭ ﺭﮨﻨﻤﺎﺋﯽﮐﺮﯾﮟ ﺍﻭﺭ ﻃﻠﺒﺎﺀ ﺳﮯ ﮔﺰﺍﺭﺵ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺩﺭﺟﮧ ﺍﻭﻟﯽ ﺳﮯ ﮨﯽ ﺍﭘﻨﮯ ﺁﭖ ﮐﻮ ﮐﺴﯽ ﮐﯽﺳﺮﭘﺮﺳﺘﯽ ﻣﯿﮟ ﺩﮮ ﮐﺮ ﮐﺘﺎﺑﺖ ﻭ ﺧﻄﺎﺑﺖ ﺣﺎﻻﺕ ﺣﺎﺿﺮﮦ،ﺗﺎﺭﯾﺦ اور موجودہ دور کے حالات ﮐﮯ ﻣﻄﺎﻟﻌﮯ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺳﺎﺗﮫ ﻋﺮﺑﯽ ﺯﺑﺎﻥ اور کسی حد تک انگریزی زبان ﺳﯿﮑﮭﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﺋﯽ ﺩﻗﯿﻘﮧ ﻓﺮﻭﮔﺰﺍﺷﺖ مت ﮐﺮﯾﮟ..

اگر مندرجہ بالا امور میں آپ نے کمزوری کا مظاہرہ کیا تو ﺁﭖ ﮐﮯ ﻓﺮﺍﻏﺖ ﺗﮏ ﺯﻣﺎﻧﮧ ﺁﭖ ﺳﮯ ﺍﺗﻨﺎ ﺁﮔﮯ ﻧﮑﻞ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﺎ ﮐﮧ ﺍﺱ ﻭﻗﺖ ﭘﯿﺸﻤﺎﻧﯽ ﮐﮯ ﻋﻼﻭﮦ ﮐﭽﮫ ﮨﺎﺗﮫ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﺋﮯ ﮔﺎ…

اب جو چاہے لے اس سے روشنی
ہم نے تو دل جلاکر سرعام رکھ دیا ہے

#وماعلیناالاالبلاغ….

179total visits,3visits today