taqreeb-musabqa-quraan-pic-from-jamia-binoria-08-04-2018 84

جامعہ بنوریہ عالمیہ میں مسابقہ حفظِ قرآن ،28ملکی وغیر ملکی طلبہ نے حصہ لیا

پوزیشن ہولڈرز طلبہ اور ان کے اساتذہ کو 2عمرہ پیکج اورڈھائی لاکھ نقد انعامات سے نوازا
کراچی()جامعہ بنوریہ عالمیہ سائٹ میں شعبہ تحفیظ القرآن کے تحت سالانہ مسابقہ حفظ قرآن وپختگی کا انعقاد کیاگیا جس میں 28ملکی وغیرملکی طلبہ نے حصہ لیا،پوزیشن ہولڈرز طلبہ کو ڈھائی لاکھ روپے کے نقدانعامات جبکہ اول پوزیشن ہولڈر طالب علم کے دو اساتذہ کو عمرے کے مکمل پیکجز دیے گئے ۔پروگرام کی نگرانی کے فرائض قاری عبدالمنان نے ، ججز کے فرائض شیخ القراء معروف قاری نذیر مالکی ،قاری ہارون الرشید المتوکل اور اسٹیج سیکرٹری کے فرائض قاری سلطان ،قاری انوار الحق نے انجام دیئے ، مکمل قرآن کے مسابقے میں اول پوزیشن حاصل کرنے والے طلبہ کو نقدی انعامات دیے گئے اور اول پوزیشن حاصل کرنے والے طلبہ کے اساتذہ کے لیے عمرے کا پیکج دیا گیا۔ اس موقع پر رئیس وشیخ الحدیث مفتی محمدنعیم نے مسابقے طلبہ کی اچھی کارکردگی پر شعبہ حفٖظ کے نگران واساتذہ کو مبارکباد پیش کرتے ہوئے کہاکہ اساتذہ کی طلبہ پر محنت اور لگن کا بدلہ اللہ کے سواء کوئی نہیں دے سکتا، مسابقے میں تقریبا ہر بچے نے بہترین انداز ، لہجہ اور قرأت میں قرآن کریم کی تلاوت کی جس کو دیکھ کر دلی خوشی محسوس ہوئی، مدارس دینی علوم کی درسگائیں ہیں ، انہوں نے کہاکہ قرآن مجید کے ان طلبہ کو اہمیت نہیں دی جارہی ہے، خطباء اور شعراء کو قدر تو بہت دیکھی لیکن قراء کی قدر نہیں کی جاتی ہے ، یہی وجہ ہے کہ قندوز میں 150طلبہ شہید ہوئے ،ماضی میں مدارس پر حملہ ہوئے لیکن کسی نے تعلیم پر حملہ قرار نہیں دیا ،انہوں نے کہاکہ نائن الیون کے بعد دہشتگردی کیخلاف جنگ کا مقصد دینی علوم کی درسگاہوں کوپروپیگنڈے کے ذریعے بند کرانا تھا لیکن دشمن کامیاب نہ ہوئے صرف اس وجہ سے کہ اللہ تعالیٰ نے قرآن مجید کی حفاظت کا ذمہ لیاہے ،جب تک مدارس ہیں اسلام کیخلاف کوئی سازش کامیاب نہیں ہوگی ، مدارس کیخلاف عالمی سطح پر مہم جوئی کا مقصد مسلمانوں کو اسلامی تعلیمات سے دور رکھنا ہے قرآن کی تلاوت سے دور رکھنا ہے ، شعبہ حفظ کے نگران مولانا عبدالمنان نے آنے والے معزز مہانوں کا شکریہ ادا کیا اورشہداء کشمیر اور قندوز کیلئے ناظم تعلیمات مولانا عبدالحمید خان غوری نے رقت امیز دعا کرائیں

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں